تازہ ترین
صفحہ اول » بھارت » بھارت نے معاشی دہشتگردی بھی شروع کردی ۔پاکستان کی انڈسٹری کو تباہ کرنے کیلئے دشمن کا گھناؤنا اقدام

بھارت نے معاشی دہشتگردی بھی شروع کردی ۔پاکستان کی انڈسٹری کو تباہ کرنے کیلئے دشمن کا گھناؤنا اقدام

India also started economic terrorism

بھارت نے معاشی دہشتگردی بھی شروع کردی

پاکستان کارپٹ مینو فیکچررز اینڈ ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن نے کہا ہے کہ بھارت ایک سازش کے تحت پاکستان کی برآمدات کو نقصان پہنچانے اور اس میں کمی کیلئے خطیر رقم خرچ کر رہا ہے ،بیرون ممالک پاکستان کا سوفٹ امیج اجاگر کرنے اور عالمی منڈیوں میں پاکستانی مصنوعات متعارف کرانے کیلئے سفارتخانے اہم کردار ادا کر سکتے ہیں۔ان خیالات کا اظہار ایسوسی ایشن کے سینئر وائس چیئرمین ریاض احمد نے ہفتہ وار اجلاس کے دوران کیا ۔ اس موقع پر کارپٹ ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ کے چیئر پرسن سعید خان ،لطیف ملک ،میجر (ر) اختر نذیر اور دیگر بھی موجود تھے۔ اجلا س میں کارپٹ انڈسٹری کو درپیش مشکلات اور ان کے حل کیلئے مختلف تجاویز پر غور کیا گیا ۔انہوںنے مزید کہا کہ حکومت کی طرف سے برآمدات بڑھانے کیلئے متعدد اعلانات توکئے گئے ہیں لیکن انہیں فی الفور عملی جامہ پہنانے کی ضرورت ہے بصورت دیگر پاکستانی معیشت مزید مشکلات سے دوچار ہوجائے گی ۔انہوںنے کہا کہ بنگلہ دیش کے ایکسپورٹرز اپنی حکومت کی مدد سے پوری دنیا میں اپنی مصنوعات بھجوا رہے ہیںاور اس کی برآمدات کا مجموعی حجم34ارب ڈالر تک پہنچ چکا ہے جنہیں آئندہ سالوں میں 50ارب ڈالر تک لے جانے کیلئے بھرپور کوششیں کی جارہی ہیں جبکہ اس کے مقابلے میں ہماری برآمدات تنزلی کا شکار ہیں۔ ہماری حکومت بھی برآمدات کرنے والے مینو فیکچررز کو ہر سطح پرسہولیات اور مراعات دے تاکہ ہمارا ایکسپورٹر بھی بیرون ممالک مقابلے کے قابل ہو سکے ۔انہوں نے کہاکہ بھارت ایک طرف جہاں اپنے ایکسپورٹرز کو وسیع پیمانے پر مراعات دے رہا ہے وہیں ایک سازش کے تحت پاکستان کی برآمدات کو نقصان پہنچانے اور اس میں کمی کیلئے الگ سے خطیر رقم خرچ کر رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہمارا حکومت سے ایک مرتبہ پھر مطالبہ ہے کہ پاکستان کے بارے میں پائے جانے والی منفی تاثر کو زائل کرنے اور پاکستانی مصنوعات کی تشہیر کیلئے بیرون ممالک موجود پاکستانی سفارتخانوں اورخصوصاًکمرشل اتاشیوں کو متحرک کیا جائے اور ان سے ماہانہ بنیادوں پر کارکردگی رپورٹ طلب کی جائے ۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون/ خبر پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔