تازہ ترین
صفحہ اول » اہم خبریں » تحریک انصاف نے دھمکی دیدی ، لیکن کس کام کی ۔۔۔؟

تحریک انصاف نے دھمکی دیدی ، لیکن کس کام کی ۔۔۔؟

PTI Threatened But for What

تحریک انصاف نے حقوق اسلام آباد مارچ کی دہمکی دے دی۔ تفصیلات کے مطابق گزشتہ رات تحریک انصاف کے مرکزی رہنما عامر مغل کی زیر صدارت حقوق اسلام آباد کنونشن ہوا جس کے مہمان خصوصی رکن قومی اسمبلی اسد عمر تھے، کنونشن میں تحریک انصاف کی تمام ضلعی قیادت نے شرکت کی۔ کنونشن میں اسلام آباد کی عوام کیلئے 26 بنیادی حقوق کا مطالبہ کیا گیا۔ جن میں سرفہرست شہری اور دیہاتی علاقے میں پانی کی کمی کو دور کرنے کا مطالبہ ، اسکولوں کی اپ گریڈیشن ، اسٹآف کی کمی دور اور داخلوں کے مسایل حل کرنے کا مطالبہ ، نیز NA۔48 اور NA۔48 کے دیہاتی علاق? میں ڈگری کالجز کا قیام ، اور اسلام آباد یونیورسٹی کا قیام ، تیسرے نمبر پر اسلام آباد جنرل ہاسپٹل کے قیام اور NA۔48 اور NA۔48 میں جنرل ہاسپٹلز کا قیام ، پمز اور پولی کلینک کی اپ گریڈیشن اور ?ر یونین کونسل میں BHU فڑی ڈسپنسری کے قیام کا مطالبہ ، چو تھے نمبر پر میٹرو پولٹن ممبران کو اسد عمر کے اسمبلی میں پیش کردہ بل کے مطابق با اختیار بنانے کا مطالبہ ، پانچویں نمبر پر CDA کا جبری زمین ایکوایر کرنے کا قانون ختم کرنے کا مطالبہ ( جس کا بل اسد عمر قومی اسمبلی میں پیش کر چکے ہیں۔

اسلام آباد کے تمام دیہاتوں کو ماڈل ولیج قرار دینے اور جن دیہاتوں پر سیکٹر بن چکے ہیں ان کے یادگاری میوزیم قایم کرنے کا مطالبہ ، نیز CDA میں کرپشن کے خاتمے کے لیے موثر اقدامات کا مطالبہ اور سایلین کا فایل پراسس مقررہ مدت کے اندر مکمل کرنے کا مطالبہ ، اور CDA میں ڈیپوٹیشن پر آے افسران کی واپسی کا مطالبہ ، اس کے علاوہ ?ر یونین کونسل میں کمیونٹی سینٹر ، ووکیشنل سینٹر ،کھیل کا میدان، قبرستان (دیہاتی ) ، لایبریری اور پارک بنانے کا مطالبہ ، ?ر وفاقی ادارے میں اسلام آباد کے رہایشیوں کیلئے 5% کوٹہ اور ضلعی اداروں میں 100 % ملازمتوں کا مطالبہ ، اسلام آباد کے تاجروں کے دیرینہ مطالبے قانون کرایہ داری کا نفاذ جس کا بل اسد عمر قومی اسمبلی میں جمع کروا چکے ہیں۔

تاجروں کو تمام چیزیں سرکاری نرخوں پر مہیا کرنے کا مطالبہ ، تمام سرکاری ، نیم سرکاری ، نجی ادارے کے ملازمین اور کسانوں کیلئے فری علاج ، تعلیم ، اور رہایش کا مطالبہ نیز کسانوں کیلئے بیج ، کھاد ، ٹریکٹر اور مال مویشی قسطوں پر بلاسود فراہمی کا مطالبہ ، کچی آبادیوں کو ماڈل کالونی قرار دے کر بجلی ، گیس ، پانی اور گلیوں کو پختہ کرنے کا مطالبہ ، لینڈ ریکارڈ کو COMPUTRIZED نیز پٹواری کا دفتر ہمیں سرکل میں منتقل کرنے کا مطالبہ ، بزرگ شہریوں کے لیے قانون سازی ، CDA اور پرایویٹ سوسائٹیز میں چاینہ کٹنگ کے خلاف کاروائی کا مطالبہ ، اسلام آباد پولیس میں اصلاحات ، میرٹ پر بھرتی اور ایف آء آر کا ڈایر ی نمبر دینے کا مطالبہ ، بجلی کی لوڈشیڈنگ ختم اور گیس کا لو پریشر ختم کرنے کا مطالبہ ، نیز ?ر دیہات میں بجلی گیس دینے کا مطالبہ ، 1122 کا دایرہ کار دیہات تک پھیلانے کا مطالبہ ، Na۔48 اور NA ۔49 میں صفائی کا موثر نظام تشکیل دینے کا مطالبہ ،سہالہ انڈسٹریل زون کی اپ گریڈیشن اور NA۔48 اور NA۔49 کے دیہاتی علاقوں میں انڈسٹریل زون کے قیام کا مطالبہ ، شہری اور دیہاتی علاقوں کیلئے موثر ٹرانسپورٹ سسٹم کے قیام اور غیر قانونی اڈوں کے خلاف کروائی کا مطالبہ ، اور شجر کاری مہم کے تحت عالمی معیار کے مطابق شجر کاری اور مارگلہ ہلزپر درختوں کی کٹائی روکنے کا مطالبہ ، G.6 کے ر?آیشیوں کو مالکانہ حقوق دینے کا مطالبہ شامل ہھے .. کامیاب کنونشن منعقد کرنے پر اسد عمر نے عامر مغل کو مبارکباد پیش کی . اس موقعہ پر خطاب کرتے حوے عامر مغل نے کھا ک? یہ اسلام آباد کے عوام کے حقوق کی جنگ ہھے اور ابھی اس کا آغاز ہھے لیکن اگر حکومت نے ان مسایل کو حل کرنے پر توجہ نہ دی تو عوام اس خلاف سڑکوں پر نکل آے گی اور ہم حقوق اسلام آباد مارچ کا اعلان بھی کر سکتے ہیں۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون/ خبر پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

مصنف: سعید احمد